Download http://bigtheme.net/joomla Free Templates Joomla! 3
Home / بین الاقوامی / ’30 مَردوں نے 4 سال تک مجھے مسلسل روزانہ جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا‘

’30 مَردوں نے 4 سال تک مجھے مسلسل روزانہ جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا‘

میکسیکوسٹی(مانیٹرنگ ڈیسک) میکسیکو میں انسانی سمگلروں کے ہتھے چڑھنے والی ایک لڑکی نے بازیابی کے بعد اپنے اوپر ہونے والے ظلم کی ایسی داستان دنیا کو سنا دی ہے کہ سن کر آپ بھی لرز جائیں گے۔ سی این این کی رپورٹ کے مطابق کیرلا جیسنٹو نامی اس لڑکی نے بتایا ہے کہ ”انسانی سمگلروں نے مجھے جسم فروشی کے دھندے پر لگا دیا اور روزانہ 30سے زائد مردمیرے خریدار بن کر آتے اور مجھے جنسی زیادتی کا نشانہ بناتے تھے۔ ہفتے کے سات دن، مسلسل چار سال تک میرے ساتھ یہی ہوتا رہا۔ ان چار سالوں میں میرے ساتھ 43ہزار 200مرتبہ جنسی زیادتی کی گئی۔“

سی این این سے گفتگو کرتے ہوئے کیرلا کا کہنا تھا کہ ”میرے بچپن میں ہی میرے ماں باپ علیحدہ ہو گئے تھے اور مجھے 5سال کی عمر میں ہی میرے ایک رشتہ دار نے جنسی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا تھا۔ اس کے بعد مسلسل میں زیادتی کا شکار ہوتی رہی۔ اس مصیبت میں میری ماں نے بھی میرا ساتھ چھوڑ دیا تھا۔ میری عمر اس وقت صرف 12سال تھی جب میں ایک انسانی سمگلر کے ہتھے چڑھ گئی۔ اس نے میرے ساتھ بہت شفقت بھرا سلوک کیا اور میں اس کے چنگل میں پھنس گئی۔ میں میکسیکو سٹی میں ٹرین سٹیشن کے قریب اپنے دوستوں کا انتظار کر رہی تھی جب چاکلیٹ بیچنے والا ایک لڑکا میرے پاس آیا اور کچھ چاکلیٹ دے کر کہا کہ یہ کسی نے بھیجی ہیں۔ اس کے 5منٹ بعد ایک ادھیڑ عمر آدمی وہاں آ گیا اور میرے ساتھ باتیں کرنے لگا۔ اس نے مجھے بتایا کہ وہ استعمال شدہ کاروں کا سیلز مین ہے۔ میری ماں مجھے گھر سے نکال چکی تھی اور مجھے ایک ٹھکانے کی ضرورت تھی لہٰذا میں اس شخص کی چکنی چپڑی باتوں میں آ گئی اور اس کے ساتھ رہنے لگی۔ پہلے تین ماہ اس نے میرے ساتھ بہت اچھا سلوک کیا اور پھر اس نے مجھے جسم فروشی پر لگا دیا۔ میں نے ایک بار بھاگنے کی کوشش بھی کی تھی لیکن اس نے پکڑ لیا اور بدترین تشدد کا نشانہ بنایا۔ اس نے زنجیر کے ساتھ مجھے پیٹا تھا۔ “

About Admin

Check Also

indian drone

بھارت کا ڈرون طیارہ گِر کر تباہ

نئی دلی(مانیٹرنگ دیسک) بھارتی بحریہ کا کہنا ہے کہ اس کا ایک ڈرون طیارہ معمول …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: