Download http://bigtheme.net/joomla Free Templates Joomla! 3
Home / پاکستان / مریم نواز مخالفت کے باوجود نوازشریف کی واپسی ، سابق وزیراعظم کا احتساب عدالت میں پیشی کا فیصلہ

مریم نواز مخالفت کے باوجود نوازشریف کی واپسی ، سابق وزیراعظم کا احتساب عدالت میں پیشی کا فیصلہ

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف اور چند دیگر اہم رہنماﺅں کے مشورے پر نواز شریف نے وطن واپسی اور احتساب عدالت میں پیش ہونے کا فیصلہ کیا جس کے بعد سابق وزیراعظم وطن واپس پہنچ چکے ہیں جبکہ مریم نواز اور ان کے ہم خیال تقریباً تمام پارٹی رہنما اس کے حق میں نہیں تھے تاہم پارٹی کے سینئر رہنماﺅں کا مشورہ مریم نواز کی خواہش پر غالب رہا۔

روزنامہ امت کے لندن میں موجود ذرائع کے مطابق  نواز شریف نے یہ فیصلہ  وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے مشورے پرکیا  ۔ اس سارے معاملے میں شہباز شریف کی مختلف شخصیات سے ہونے والی ملاقاتوں نے بھی اہم کردار ادا کیا۔ واضح رہے کہ لندن روانگی سے قبل وزیراعلیٰ پنجاب نے سینئر پارٹی رہنما چوہدری نثار اور حکومت کی اتحادی پارٹی جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن سے اعلانیہ جبکہ چند دیگر اہم شخصیات سے غیر اعلانیہ ملاقاتیں کی تھیں۔ ذرائع نے بتایا کہ ہفتے کو رات گئے تک لندن میں ہونے والے طویل مشاورتی عمل میں وزیر اعلیٰ پنجاب نے اپنے بڑے بھائی نواز شریف کو آگاہ کیا کہ پارٹی کے چند سینئر رہنماﺅں کے علاوہ اتحادی پارٹی جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کا بھی یہی مشورہ ہے کہ سابق وزیراعظم کو پاکستان واپس آکر احتساب عدالت میں پیش ہونا چاہیے۔ ذرائع کے مطابق مشاورتی عمل میں قانونی ماہرین سے لئے جانے والے ان پٹ کو بھی ڈسکشن کا حصہ بنایا گیا اور یہ خدشہ ظاہر کیا گیا کہ اگر نواز شریف دوسری بار بھی احتساب عدالت میں پیش نہیں ہوئے تو ان کے وارنٹ گرفتاری کے بعد زیادہ امکانات ہیں جبکہ عدم پیشی کا سلسلہ جاری رہنے پر آگے چل کر سابق وزیراعظم کو اشتہاری ملزم بھی قرار دیا جاسکتا ہے۔ اس صورت میں انتخابی بل کے ذریعے نواز شریف کو پارٹی صدر بنانے کی کوششیں بری طرح متاثر ہوسکتی ہیں۔ اپوزیشن پہلے ہی ایک نااہل فرد کی پارٹی صدارت پر سوالات اٹھارہی ہے۔ ممکنہ صورتحال میں مخالفین کو پروپیگنڈہ کرنے کا زیادہ موقع مل جائے گا۔

ذرائع کے مطابق شہباز شریف نے سابق وزیراعظم کو بعض اہم شخصیات کے اس پیغام سے بھی آگاہ کیا، جس میں شریف فیملی کی جانب سے احتساب عدالت کے سمن کو سنجیدگی سے نہ لنے پر تشویش کا اظہار کیا گیا تھا اور کہا گیا تھا کہ اس طرح کے رویے سے ملک میں قانون کی بالا دستی بری طرح متاثر ہورہی ہے اور ایک غلط روایت قائم ہورہی ہے۔ ذرائع کے مطابق یہ پیغام وزیراعلیٰ پنجاب کو چوہدری نثار کے ذریعے بالواسطہ بھی ملا۔ شہباز شریف نے یہ تمام زمینی حقائق تفصیل کے ساتھ اپنے بڑے بھائی نواز شریف کے سامنے رکھے۔ ان تمام عوامل کو سامنے رکھ کر سابق وزیراعظم نے پاکستان واپسی اور احتساب عدالت کے سامنے پیش ہونے کا حتمی فیصلہ کیا۔

رپورٹ کے مطابق مریم نواز اور ان کے ہم خیال بعض پارٹی رہنما اپنے اس موقف پر قائم تھے کہ سابق وزیراعظم لندن میں ہی قیام کریں اور کسی صورت احتساب عدالت میں پیش نہ ہوں تاہم وزیراعظم شاہد خاقان عباسی ا ور وزیراعلیٰ پنجاب نے اس موقف کو یکسر مسترد کردیا اور خود نواز شرف نے بھی اپنی صاحبزادی کے مشورے سے اتفاق نہیں کیا،یہ فیصلہ نہ صرف مقامی لیگی قیادت بلکہ اپوزیشن کے لئے بھی حیران کن تھا۔

About Admin

Check Also

ayesha gulalai

عمران کی حکومت آئی تو منشیات کے اڈے کھل جائیں گے، گلالئی

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)پی ٹی آئی کی منحرف رکن قومی اسمبلی عائشہ گلالئی نے کہا ہے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: